امام حسن علیہ السلام یا حسن بن علی بن ابی طالب علیہ السلام (پیدائش: 1 دسمبر 624ء–وفات: 1 اپریل 670ء) چھِ حضرت علی علیہ السلامن تہ حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن ہنز کوریہ حضرت فاطمہ الزہرا علیہاالسلامن ہندی فرزند امام حسین علیہ السلامن ہندی بھائے۔ اہل اسلام چھِ امن احترام کران ۔ سنی مسلمان چھِ یمن پونژم خلیفہ راشد مانان۔[1][2] ییلہ زن شیعہ مسلمان چھِ یمن دویم امام مانان۔

اسم مبارک حضرت امام حسن علیہ السلام

ولادتاؠڑِٹ

امام حسن علیہ السلام چھِ زامتی 15 ماہ رمضان 3ھ مطابق 1 دسمبر 624 عیسویس مَنٛز مدینہ شریفس مَنٛز۔ [3]

شہادتاؠڑِٹ

امام حسن علیہ السلام آیہ 28 صفر المظفر 50ھ مطابق 1 اپریل 670 عیسویس مَنٛز زہر دیتھ شہید کرنہ۔ جعدہ بنت اشعت لعینہ دویت امن زہر۔ زہر دنہ وول اوس حاکم وقتھ۔ یم آیہ جنت البقیس مَنٛز دفن کرنہ۔ [3]

 
حضرت امام حسن علیہ السلامن ہندی روضہ پاک یس زنہ 1925عیسویس مَنٛز وہابیوں شہید کرنآو

ناو تہ لقباؠڑِٹ

یمن چھ اصل عبرانی ناوک عربی ناو۔ عبرانی پاٹھی چھ اہند ناو 'شبر' تہ عربی پاٹھی چھ امہ ناوک ترجمہ 'حسن'۔ یمن چھِ واریاہ لقب مثالے اَلْمُجْتَبیٰ، اَلسَّیِّد، سَیِّدُ شَبابِ أهلِ الْجَنَّة، اَلزَّکیّ، اَلتَّقیّ، اَلسِّبط، اَلطَیِّب، اَلْوَزیر، اَلْقائِم، اَلْأمین، اَلْبَرّ، اَلزّاهِد، اَلْأمیر، اَلْحُجَّة، اَلْکَفیّ، اَلْوَلیّ، سِبطِ اَکبَر، سبطِ اَوَّل، سبطِ نَبیّ، رَیْحانَةُ النَّبیّ، کَریمُ أهلِ الْبَیت۔ [3]

خلافت ظاہریاؠڑِٹ

حضرت علی علیہ السلامن ہندی شہید گژھنہ پتہ آیہ یم خلافتہ کرنہ خاطرہ منتخب کرنہ۔ یم رودی ظاہری خلیفہ ستن ریتن۔ امہ پتہ آیہ معاویہس حوالہِ کرنہ۔ معاوین کر خلافت ملوکیتس یعنی بادشاہتس مَنٛز تبدیل تہ پھڑراون اسلامک کمر تہ تلن گوڈنیک فتنہ۔ [4]

خدمت اسلاماؠڑِٹ

امام حسن علیہ السلام آسی غریبن، غلامن تہ منڈن عطیہ دِوان۔ تم آسی پننہ علمہ، سخاوتہ، تاب آوری تہ بہادری خاطرہ پرزناونہ یوان۔ تمو گزآری پننی ساری زندگی مدینس مَنٛز مسلمانن ہنز خدمت کرنہ خاطر۔ [5]

کلام نوراؠڑِٹ

حَوالہٕاؠڑِٹ

  1. الصلابي, علي محمد (8 اپریل 2004). "سيرة أمير المؤمنين خامس الخلفاء الراشدين الحسن بن علي بن أبي طالب رضي الله عنهما، شخصيته وعصره". دار المعرفة للطباعة والنشر. Check date values in: |date= (help)
  2. فريد, أحمد. "من أعلام السلف - ج 1". IslamKotob.
  3. 3٫0 3٫1 3٫2 نجم الحسن کراروی: چودہ ستارے، مطبوعہ لاہور، 1393ھ/ 1973ء
  4. Ayati, Dr. Ibrahim (2013-11-14). "A Probe into the History of Ashura'". Ahlul Bayt Digital Islamic Library Project.
  5. بحار الانوار از علامہ مجلسی